امیر المومنین: آزادی کا مجسم پیکر

تحریر: عبد الستار سعید
آزادی انسانی بنیادی حقوق میں سے ایک ہے۔ جس طرح انسان اپنی ماں سے آزاد فرد کی حیثیت سے پیدا ہوتا ہے۔ ایسی انسانی برادری ، قوم یا ملک کو بھی آزادی کا حق حاصل ہے۔
جب تک کہ دنیا میں اخلاقی معیار ناگفتہ بہ ہوگئے ، آزادی کو آب و ہوا کی طرح انسانی زندگی کا ایک لازمی عنصر سمجھا جاتا تھا۔ آزادی انسان یا انسانی معاشرے کے لئے اہم شرط سمجھی جاتی تھی۔ اقوام اور ممالک اپنی آزادی کے دفاع کے لئے سالوں نہیں صدیوں تک جدوجہد کرتے تھے۔ غلامی اور دوسروں پر انحصار کرنا سب سے گھناؤنا جرم سمجھا جاتا تھا۔
لیکن حالیہ صدیوں میں نوآبادیات اور عالمگیریت کے آغاز کے ساتھ ہی جب دنیا سپر پاورز اور نوآبادیات میں تقسیم ہوگئی، بہت ساری قومیں مغربی نوآبادیاتی حکمرانی کے تحت آ گئیں ، ان سے آزادی چھین کر طویل عرصے تک غلام رہی۔ یہاں تک کہ دنیا کی بیشتر غلام قومیں غلامی کی عادی ہوگئیں۔ اس ضمن میں استعمار نے آزادی سے محروم ہونے والی اقوام کے لئے اپنے مفادات کے پیش نظر آزادی کے حقیقی معنی کو بھی مسخ کردیا۔ اپنے میڈیا اور ثقافتی جارحیت کے ذریعہ انہوں نے یہ باور کرایا کہ آزادی کا مطلب سیاسی آزادی نہیں بلکہ انفرادی آزادی (لبرل ازم) ہے۔ لہذا اگر آپ مغربی غلامی کے طوق سے جکڑے ہوئے ہیں تو اس میں کوئی حرج نہیں ہے، کیوں کہ آپ کو انفرادی آزادی حاصل ہے اور آپ مغربی لبرل ثقافت کا استعمال کرتے ہوئے جو چاہیں کر سکتے ہیں۔
حریت اور آزادی کے اس قحط میں اللہ رب العزت نے افغانستان میں ملا محمد عمر مجاہد کے نام سے ایک حکمران پیدا کیا، جو عالم اسلام کے اہم ممالک میں سے ایک ہے۔ ملا صاحب نے بطور امیر المومنین اسلامی سیاست کے فراموش کردہ تصورات کو زندہ کیا اور اسلامی معیارات کے برابر شرعی نظام قائم کیا۔ اسی طرح انہوں نے دنیا کی غلام قوموں اور حکمرانوں کو آزادی کا سبق بھی سکھایا۔
امیرالمومنین ملا محمد عمر مجاہد رحمہ اللہ افغانستان کی جدوجہد آزادی کے ہیرو، قوم کی عزت و ناموس کے محافظ اور اسلامی نظام کے نفاذ اور اپنی دھرتی کی خودمختاری حاصل کرنے کے لئے جہادی تحریک کے قائد تھے، وہ ایک عظیم مجاہد رہبر، حریت پسند اور جنگ آزادی کے نامور سپورت اور زہد و تقوی کی دولت سے مالامال تھے۔
میں نے امارت اسلامیہ کے ایک سنیئر رہنما سے پوچھا کہ آپ ملا صاحب کے قریب رہتے تھے ، آپ کے خیال میں ملا صاحب کی سب سے بڑی خوبی کیا ہے؟
انہوں نے جواب دیا ، "میں نے موجودہ حکمرانوں کی موجودہ صورتحال کا مطالعہ کیا ہے اور پھر میں نے ملا محمد عمر مجاہد کی سیاست اور قیادت دیکھی، تو میں یہ کہہ سکتا ہوں کہ ملا صاحب اس وقت کے سب سے زیادہ حریت ترین حکمران تھے۔” اسے اپنے فیصلوں اور اقدامات میں مکمل آزادی حاصل تھی اور وہ کسی بین الاقوامی یا علاقائی ملک یا گروہ کے زیر اثر نہیں تھے۔
آج کی دنیا کے بیشتر حکمران اس قدر غلام بن چکے ہیں کہ وہ اپنا مقدر امریکہ ، روس ، برطانیہ ، چین یا کسی اور سپر پاور کے ماتھے پر دیکھتے ہیں۔ وہ جو بھی فیصلہ کرتے ہیں ، وہ پہلے ان کو عالمی طاقتوں کے ساتھ شیئر کر دیتے ہیں اور اپنے فیصلوں میں وہ اپنے مذہب ، ملک اور عوام کی بجائے اپنے آقا ملک کے مفادات کو یقینی بنانے پر زیادہ توجہ دیتے ہیں۔
لیکن ملا محمد عمر مجاہد جو خدائے تعالٰی کے نیک اور مخلص بندے تھے، خدا تعالٰی کی بارگاہ میں پانچ بار پیشانی زمین پر رکھتے تھے اور اللہ کے حضور سر جھکاتے تھے وہ دنیا میں کسی ملک یا سپرپاور کے سامنے سر جھکانے کے قائل نہیں تھے۔
در حقیقت اس طرح کی آزادی کی اصل وجہ ملا صاحب کی ایمانداری اور کامل یقین تھا۔ علمائے کرام کا کہنا ہے کہ خدا کی محبت اور خدا کا خوف کسی اور محبت اور خوف سے زیادہ مضبوط ہے۔ جس شخص کا دل اللہ کی محبت اور خوف سے معمور ہو اس دل سے باقی ساری محبتیں اور خوف نکل جاتے ہیں، چنانچہ مرحوم ملا صاحب جو ایک سچے مومن کی حیثیت سے اللہ سے ڈرتے تھے ، اللہ کے خوف سے اپنے دل میں کسی اور کے خوف کو جگہ نہیں دیتے تھے۔
آج کل ہم دیکھتے ہیں کہ اشرف غنی کی سربراہی میں کابل انتظامیہ ہر فیصلے میں امریکی مزاج کی طرف دیکھتی ہے۔ اشرف غنی نے کابینہ کے انتخاب کا آغاز کیا لیکن جب ایلس ویلز نے امریکہ سے ٹویٹ کیا تو کابل حکام نے فورا توبہ کرتے ہوئے ایک سرکاری بیان جاری کیا کہ کابینہ کے ارکان کی تقرری کا عمل روک دیا گیا ہے۔ یہ صرف کابل حکام نہیں ہیں، بلکہ بیشتر محکوم ممالک کے حکمران آزادی کی نعمت سے محروم ہیں۔
لیکن ملا صاحب ان سے بہت مختلف تھے۔ امریکی حملے سے قبل جارج ڈبلیو بش نے بین الاقوامی فوجی اتحاد تشکیل دیا اور دنیا کے محکوم ممالک کے حکمرانوں نے امریکہ کی خوشنودی کے لئے ایک دوسرے سے سبقت لینے میں مصروف تھے، ایک دن ملا صاحب قندھار میں ریڈیو سن رہے تھے کہ بش نے متکبر انداز اور دھمکی آمیز لہجے میں کہا "میں اسامہ بن لادن کو مردہ یا زندہ چاہتا ہوں۔ ملا صاحب نے جواب دیا: خدا کی قسم آپ کو اسامہ زندہ ملے گا اور نہ ہی مردہ ملے گا۔
اس طرح کا فیصلہ کن اور غیریقینی ردعمل جدید دور کے غلام ذہن رکھنے والے حکمران کے لئے قابل فہم نہیں ہوگا، جو اس جواب کو سننے پر شاید کچھ اور ردعمل ظاہر کریں کہ یہ بین الاقوامی قانون ، سفارتی آداب اور سیاسی اصولوں کے خلاف ہے۔ لیکن اسلام ، انسانیت اور افغانیت کی بنیاد پر یہ جواب سو فیصد برابر ہے اور خدا کے سچے اور آزاد بندے کے منصب کی نمائندگی کرتا ہے۔
علامه اقبال آزاد انسان کی تعریف اس طرح کرتے ہیں:
مرد حر محکم ز ورد(لاتخف)
ما بمیدان سر بجیب او سر بکف
مرد حر از لااله روشن ضمیر
می نگردد بندۀ سلطان و میر
مرد حر چون اشتران باری برد
مرد حر باری برد خاری خورد
پای خود را آنچنان محکم نهد
نبض ره از سوز او بر می جهد
دارد اندر سینه تکبیر امم
در جبین اوست تقدیر امم
قبلۀ ما گه کلیسا ، گاه دیر
او نخواهد رزق خویش از دست غیر
ما همه عبد فرنگ او عبده
او نگنجد در جهان رنگ و بو
کار ما وابستۀ تخمین و ظن
او همه کردار و کم گوید سخن
ما گدایان کوچه گرد و فاقه مست
فقر او از لااله تیغی بدست
شکوه کم کن از سپهر گرد گرد
زنده شو از صحبت آن زنده مرد
صحبت از علم کتابی خوشتر است
صحبت مردان حر آدم گر است
می نروید تخم دل از آب و گل
بی نگاهی از خداوندان دل
اندر این عالم نیرزی با خسی
تا نیاویزی بدامان کسی
مسلم فلسفی اور شاعر علامہ اقبال کی یہ نظم بہت لمبی ہے، جس میں ایک سچے مومن کی صفات کا تذکرہ کیا گیا ہے، لیکن جب بھی میں یہ نظم پڑھتا ہوں تو موجودہ زمانے میں مجھے کوئی اور حکمران نظر نہیں آتا جس اس نظم کا مصداق ہ ۔ سوائے امیر المومنین ملا محمد عمر مجاہد کے۔
کچھ جاہل اور میڈیا کے پروپیگنڈے کے زیر اثر آنے والے نوجوان یہ سمجھتے ہیں کہ ملا صاحب پاکستانی حکام کے زیر اثر تھے۔ لیکن پاکستان کی تاریخ کے سب سے طاقتور حکمران جنرل پرویز مشرف نے اپنی کتاب میں ملا صاحب کو ایک قابل فخر رہنما قرار دیا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ وہ اسامہ بن لادن کے حوالے سے جرنیل کی فرمائش قبول نہیں کرتے تھے۔
اگر ملا صاحب کی مختصر وضاحت کی جائے تو یہ کہنا مناسب ہوگا کہ موجودہ دور میں وہ آزادی کے مجسم پیکر تھے۔ اس بارے میں تحقیق کرنے اور بہت کچھ لکھنے کی ضرورت ہے۔
خدا آپ پر رحم کرے

About The Author

Related posts